basant 45

بسنت منانے کا اصولی فیصلہ

بسنت منانے کا اصولی فیصلہ
صوبائی وزیر اطلاعات فیاض الحسن چوہان نے کہا ہے کہ رواں سال فروری 2019ء کے دوسرے ہفتے بسنت منانے کا اصولی فیصلہ ہو گیا ہے۔ لاہور میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے فیاض الحسن چوہان کا کہنا تھا کہ بسنت لاہور کا ثقافتی فیسٹیول ہے جس سے اربوں روپے کا بزنس ہوتا تھا۔ لاہور کے ثقافتی حلقوں کی جانب سے بسنت کا تہوار منانے کا مطالبہ کیا جا رہا تھا۔ فیاض الحسن چوہان نے بتایا کہ اس حوالے سے کمیٹی قائم کر دی گئی ہے جو بسنت کے منفی پہلوؤں کا جائزہ لے گی اور اس پر اپنی تجاویز دے گی، تاہم فروری کے دوسرے ہفتے بسنت منانے کا اصولی فیصلہ ہو گیا ہے۔ صوبائی وزیر اطلاعات کا کہنا تھا کہ لاہور کے عوام تاریخی فیسٹیول منائیں گے، اس حوالے سے سپریم کورٹ کا فیصلہ موجود ہے، بسنت پر کوئی پابندی نہیں ہے۔بسنت کے تہوار کی بحالی میں دلچسپی ظاہر کرتے ہوئے کمیٹی قائم کر دی ہے جو وزیر قانون بشارت راجہ کی سربراہی میں سفارشات مرتب کرے گی. شہریوں کو یاد رہے کہ بسنت تہوار کے موقع پر ہوائی فائرنگ، خطرناک کیمیکل، ڈور پر شیشے کے استعمال اور گلے پر ڈور پھرنے کی وجہ سے کئی قیمتی جانیں ضائع ہوئیں جس کی وجہ سے حکومت کو مجبور ہو کر 2007ء میں اس تہوار پر پابندی لگانا پڑی۔ پولیس کو سختی سے احکامات جاری کیے گئے تھے کہ جو شخص پتنگ بازی کرے گا اس پر فرد جرم عائد کر دی جائے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں